گندم کی قلت مصنوعی تھی ، رپورٹ وزیراعظم کو پیش

آٹا بحران سے متعلق رپورٹ وزیراعظم عمران خان کو پیش کردی گئی ہے، اس میں کسی حکومتی شخصیت کا ذکر نہیں ، بحران کو مصنوعی قرار دیا گیا ہے اور وجہ بدانتظامی بتائی گئی ہے۔

آٹا بحران کے ذمے داروں کا پتہ لگانے کیلئے بنائی گئی خصوصی کمیٹی کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ملک بھر میں کہیں بھی گندم کی کمی نہیں ، قلت مصنوعی طور پر پیدا کی گئی ، ملک میں اب بھی 2 اعشاریہ ایک ملین میٹرک ٹن گندم موجود ہے ، رپورٹ میں بدانتظامی کو آٹا بحران کا سبب قرار دیا گیا ہے.

یاد رہے کہ آٹے کا بحران 3 ماہ پہلے پیدا ہوا تھا اور ایک کلو آٹے کی قیمت 85 روپے ہوگئی تھی، صرف آٹا ہی نہیں چینی کی بھی قلت ہوئی تھی اور قیمت بڑھا دی گئی تھی۔

اپوزیشن جماعتیں چینی اور گندم بحران میں حکومتی شخصیات کو ملوث قرار دیتی رہی ہیں۔ حزب اختلاف کے رہنماوں کا مطالبہ تھا کہ ذمے داروں کو سامنے لایا جائے۔

وزیراعظم نے 15 فروری کو لاہور میں تقریب سے خطاب کے دوران کہا تھا کہ چینی اور آٹا بحران حکومت کی کوتاہی کے باعث پیدا ہوا۔

ٹرینڈنگ

مینو