سب سے پہلے رنگوں کا انتخاب کریں

بچوں کا کمرہ ڈیزائن کرنا ہو تو سب سے پہلے رنگوں کا انتخاب کریں کیونکہ کلرز شخصیت پر اثر انداز ہوتےہیں ،  بچوں کے کمرے میں تمام رنگ ہونے چاہئیں لیکن کون سا رنگ سب سے زیادہ واضح ہوگا اس کا فیصلہ آپ خود کریں۔

دیواروں پر تتلیوں کا استعمال

آپ بچی کا کمرہ سجانا چاہتے ہیں تو رنگوں والے کارڈ سے تتلیاں بنائیں اور گلو سے دیوار پر خوبصورت انداز سے لگائیں ، وقت بچانا ہو تو انھیں بازار سے خرید لیں۔ ستاروں کے رنگ برنگے چھوٹے بڑے اسٹیکر بھی خوب صورتی بڑھاتے ہیں۔

گیلری وال

کمرے میں پلاسٹک یا لکڑی کے ذریعے گیلری بنائیں ، اس میں آرٹ ورک اور کھلونے رکھیں۔ بچوں کو آرٹ ورک سکھائیں اور ان کی تخلیقات بھی گیلری میں سجائیں۔

بچوں کا خیمہ

والدین عموما بچوں کا خیمہ بازار سے خریدتے ہیں ، یہ باآسانی گھر میں بھی بنایا جا سکتا ہے۔ لکڑی کے ٹکڑے لیں ، انہیں تصویر دیکھ کر بالکل اسی طرح باندھ دیں ، پرانی بیڈ شیٹ کے درمیان میں سوراخ کریں اور فریم پر چڑھادیں ، اب خیمے میں دروازے کیلئے کپڑے کا ٹکرا کاٹ دیجئے اور خیمے میں کھلونے رکھ دیں ، آپ کا بچہ اس خیمے اور کھلونوں سے لطف اندوز ہوگا۔

دیوار پر گہرے رنگوں کا استعمال

پلے روم یا بیڈ روم کی دیواریں مختلف رنگوں سے بار بار پینٹ کرانے کے بجائے سستا حل نکالیں ، سفید رنگ کا پینٹ دیوار پر کرائیں اور مختلف رنگوں کے وال پیپرز کو تکون ، گول اور دیگر شکلوں میں کاٹ کر دیوار پر چپکا دیں۔

وال پیپر

دیواروں پر وال پیپر لگانے ہوں تو جانوروں کے ڈیزائن ، پھولوں کے پرنٹ یا دیگر جاذب نظر رنگوں کے حامل وال پیپر کا انتخاب کریں۔ دیوار کے ساتھ کوئی ایسی چیز ضرور رکھیں جس کی وجہ سے بچے کا ہاتھ وال پیپر پر نہ لگے، اسطرح آپ کو وال پیپر برسوں تک تبدیل کرنا نہیں پڑیں گے۔

پڑھائی کی جگہ

بچوں کی عمر کے اعتبار سے ان کے کمرے میں پڑھائی کیلئے میز ، کرسی اور الماری ہونا ضروری ہے ، کرسی آرام دہ اور میز اتنی بڑی ہو کہ بچہ اپنی کتابیں ، آئی پیڈ یا لیپ ٹاپ کھول کر پڑھ سکے ، الماریاں ایسی بنوائیں جن میں  مختلف سائز کی کتابیں فائلیں اور دیگر اشیا بھی رکھی جاسکیں۔

درازیں اور باسکٹس

بچوں کی مختلف اشیا رکھنے کیلئے مختلف درازیں بنائیں اور باسکٹس رکھیں۔ ہر باسکٹ یا دراز پر لیبل لگائیں تاکہ بچے ان میں سامان رکھ سکیں ، یہ عمل بچوں کو چیزیں ترتیب کے ساتھ رکھنے کا عادی بناتا ہے۔

ٹرینڈنگ

مینو