شمالی کوریا کے سربراہ کے انتقال کی افواہیں

ہانگ کانگ کے صحافی نے شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم جانگ ان کے انتقال کا دعوی کیا ہے جس سے ان افواہوں کو تقویت مل گئی ہے کہ شمالی کوریا کے رہنما زندہ نہیں رہے۔

جاپانی ہفت روزہ نے جمعہ کو اپنی رپورٹ میں بتایا تھا کہ کم جانگ ان دیہی علاقے کے دورے پر تھے جہاں وہ دل میں تکلیف کے بعد گر پڑے۔ ان کی حالت ہارٹ سرجری کے بعد تشیویشناک ہوئی اور انھیں مصنوعتی تنفس کے ذریعے زندہ رکھنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

برطانوی میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا کہ چین نے طبی ماہرین کی ٹیم شمالی کوریا بھیج دی ہے تاکہ کم جونگ ان کا علاج کیا جاسکے۔

شمالی کوریا نے سرکاری طور پر ابتک ان اطلاعات کی تصدیق یا تردید نہیں کی ، چین کی وزارت خارجہ کا ردعمل بھی سامنے نہیں آیا البتہ جنوبی کوریا کے حکام کا کہنا ہے کہ انھیں پڑوسی ملک میں کسی غیرمعمولی اقدام کا علم نہیں۔ سیئول میں ذرائع نے رائٹرز کو بتایا تھا کہ کم جونگ ان زندہ ہیں اور بہت جلد منظر عام پر آئیں گے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ بھی صحافیوں سے گفتگو کے دوران کم جانگ ان کی خرابی صحت سے متعلق اطلاعات کو بے بنیاد قرار دے چکے ہیں۔

ٹرینڈنگ

مینو