چار لوگ عقل کل نہیں، نواز شریف کا بیانیہ اپنایا جائے، رہنما

نون لیگ کی پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں کئی ارکان نے شہباز شریف کے فوری طور پر وطن آنے کامطالبہ کردیا۔

نون لیگ کے اجلاس میں کئی اہم رہنماؤں نے پارٹی پالیسی پر کھل کر اعتراضات کردیئے ، رہنماؤں کا کہنا تھا کہ شہباز شریف کو وطن آکر قومی اسمبلی میں اپنا کردار ادا کرنا چاہئے۔

سینیٹر صابر شاہ نے کہا کہ پارٹی قائد کا بیانیہ چھوڑ کر نقصان اٹھانا پڑا ، نواز شریف کا بیانیہ نہ اپنایا گیا تو پارٹی عوامی حمایت سے محروم ہوجائے گی۔ عوام پارلیمنٹ میں نون لیگ کی کارکردگی پر افسردہ ہیں، ہمیں تحریک انصاف کی خراب کارکردگی کا فائدہ اٹھانا چاہئے تھا۔

جاوید لطیف نے بڑے بڑوں کو کھری کھری سنادیں ، کہنے لگے 4 افراد عقل کل نہیں، مشاورت میں دیگر رہنماؤں کو بھی شامل کیا جانا چاہئے، انھوں نے احتجاجی حکمت عملی تیار کرنے کا بھی مشورہ دیا۔

خواجہ آصف نے جواب دیا کہ جوانی میں وہ بھی بہت بڑھکیں مارتے تھے  ، پارٹی کے تمام فیصلے قائدین کی ہدایت پر کئے گئے ہیں اور کسی نے اپنی مرضی نہیں چلائی۔

خواجہ آصف نے نواز شریف کے معالج ڈاکٹر عدنان پر لندن میں حملے کی مذمت کی ، انھوں نے کہا یہ صرف اتفاق نہیں ، حملے کے ڈانڈے کہاں ملتے ہیں یہ جاننے کیلئے تحقیقات ہونی چاہئے، یہ کیس لندن پولیس کا بھی امتحان ہے ، پارٹی رہنماؤں نے کہا کہ نوازشریف جب سے لندن گئے ہیں تب سے ڈاکٹر عدنان کو ہراساں کیا جارہا تھا۔

ٹرینڈنگ

مینو