طلبا ملک کا قیمتی اثاثہ ہیں ، امریکی سفیر

قرۃ العین

امریکی سفیر پال جونز نے کراچی میں قائم روشن پاکستان اکیڈمی کا غیراعلانیہ دورہ کرکے اسکول کے 200 بچوں سے ملاقات کی ہے۔

دورہ کرنے والے امریکی وفد میں قونصل جنرل رابرٹ سلبسرٹین بھی شامل تھے ، انہوں نے طلبا و طالبات سے بات چیت کرنے کے ساتھ اسکول کے کمیونٹی کی شراکت سے چلنے والے  تعلیمی ماڈل کے متعلق معلومات بھی حاصل کیں۔

امریکی سفیر نے اسکول کی بانی اور امریکی حکومت کے تعاون سے منعقدہ ایمرجنگ لیڈرز آف پاکستان 2013 کی المنا حمیرہ بچل اور اکیڈمی کے ڈائریکٹر محمد الیاس کی تعریف کی، پال جونز نے کہا کہ روشن پاکستان اکیڈمی کے قابل اور جذبے سے سرشار طلبا و طالبات کو دیکھ کر اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ پاکستانی نوجوان ملک کیلئے قیمتی اثاثہ ہیں جن کے ذریعے خوشحالی اور ترقی حاصل کی جاسکتی ہے۔

امریکی حکومت حمیرہ بچل کی طرح ہر سال 800 سے زائد پاکستانیوں کو اپنے اخراجات پر ایکسچینج پروگراموں کے تحت امریکا بھیجتی ہے ، یہ پاکستانی وہاں جاکر مختلف شعبوں میں کام کرنے کا تجربہ حاصل کرکے پاکستان آتے ہیں اور ملک کی معاشی ترقی و خودمختاری کیلئے کام کرتے ہیں۔

روشن پاکستان اکیڈمی غیرمنافع بخش سماجی تنظیم ہے جو حب (بلوچستان) اور گلشن مزدور کراچی کے پسماندہ خاندانوں کے بچوں کو تعلیم فراہم کررہی ہے۔ اس اسکول کی بنیاد حمیرہ بچل نے 2016 میں رکھی تھی جس کا مقصد تعلیم اور طلبا و طالبات کو پیشہ ورانہ شعبوں کے بارے میں رہنمائی فراہم کرنا ہے۔

ٹرینڈنگ

مینو