بہنوئی کے بھتیجے نے فائرنگ کی، پولیس

پیپلزپارٹی کی رکن سندھ اسمبلی شہناز انصاری کو نوشہرو فیروز میں قتل کردیا گیا، پولیس کا کہنا ہے کہ قتل زمین کے تنازعے پر کیا گیا ہے۔

خواتین کی مخصوص نشست پر رکن سندھ اسمبلی منتخب ہونے والی شہناز انصاری اپنے بہنوئی زاہد کھوکھر کے چہلم میں شرکت کیلئے نوشہروفیروز کے علاقے دریا خان گئی تھیں۔

پولیس کے مطابق شہناز انصاری کے بہنوئی مرحوم زاہد کھوکر کے بھتیجے نے فائرنگ کی۔ شنہاز انصاری کے شوہر ڈاکٹر حمید انصاری نے بتایا کہ ان کی اہلیہ کو بالوں سے پکڑ کر 3 گولیاں ماری گئیں، مقتولہ کو دھمکیاں دی جا رہی تھیں اور ایس ایس پی فاروق احمد کو دھمکیوں کی اطلاع بھی دی گئی تھی۔ پولیس اسکواڈ کا مطالبہ کیا گیا تھا لیکن چہلم کے مقام پر پولیس نہیں تھی۔

سابق صدر آصف زرداری اور چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے قتل کی مذمت کرتے ہوئے  شہناز انصار ی کو پارٹی اثاثہ قرار دیا، انھوں نے قاتلوں کی فوری گرفتار کا مطالبہ کیا۔

وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ نے قتل کا نوٹس لے کر ڈپٹی کمشنر اور ایس ایس پی سے رپورٹ طلب کرلی ہے اور ملوث افراد کی فوری گرفتاری کا حکم دیا ہے۔

ٹرینڈنگ

مینو