مسئلہ کشمیر خود حل کریں گے، بھارتی وزیرخارجہ

بھارت کے وزیر خارجہ سبرامنیم جے شنکر نے امریکا کے قد آور سینیٹر لنزی گراہم کو میونخ سیکیورٹی کانفرنس میں ٹکا سا جواب دے کر امریکا کی غیرت کو للکار دیا ہے۔

میونخ کانفرنس کے دوران ایک سیشن میں امریکی سینیٹر لنزی گراہم نے بھارتی وزیر خارجہ سے کہا کہ نہ جانے کشمیر کی صورت حال کا انجام کیا ہو گا ، بہتر یہ ہے کہ پاکستان اور بھارت دونوں جمہوریتیں مل جل کر اس مسئلے کا حل نکالیں۔

امریکی سینیٹر لنزے گراہم نےکشمیر کا ذکر چھیڑ کر سبرا منیم جے شنکر کی دکھتی رگ پہ ہاتھ رکھا ہی تھا کہ بھارتی وزیرخارجہ سفارتی آداب بھول گئے۔ انہوں نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آپ فکر نہ کریں، اس مسئلے کا حل ایک ہی جمہوریت نکال لے گی اور آپ کو پتا ہے کہ وہ کونسی جمہوریت ہے جو یہ حل نکالے گی۔ انھوں نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتیرس کے دورہ پاکستان پر بھی برہمی کا اظہار کیا اور کہا کہ اقوام متحدہ کا اعتبار کم ہو چکا ہے۔

بھارتی وزیرخارجہ نے امریکا کے سینیٹر لنزی گراہم کی ایسے موقع پر سبکی کی ہے جب لنزی گراہم کے دوست اور امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ اسی ماہ بھارت کا دورہ کرنے والے ہیں ، امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ ٹرمپ نریندر مودی سے ملاقات میں مسئلہ کشمیر اٹھائیں گے۔

امریکی ڈیموکریٹس کا کہنا ہے کہ ری پبلکن حکومت نے امریکا کی جتنی بے عزتی دنیا میں کرائی اسکی مثال نہیں ملتی۔ ایک پاکستانی امریکن ڈیموکریٹ لیڈر نے زبرنیوز سے بات کرتے ہوئے کہا کہ سینیٹر لنزی گراہم کو چاہئے کہ امریکا کا وقار بلند کرنے کیلئے صدر ٹرمپ پر زور دیں کہ وہ دورہ بھارت میں مسئلہ کشمیر اٹھائیں اور نریندر مودی پر دباو ڈالیں کہ پاکستان سے مذاکرات کرکے خطے میں امن کی راہ ہموار کی جائے۔ لنزی گراہم کی خاموشی امریکا کا وقار کم کردے گی۔

ٹرینڈنگ

مینو