ٹرمپ نے ناک رگڑ دی، برطانیہ کھلنے کیلئے تیار

کورونا وائرس پر بڑی حد تک قابو پانے کے بعد یورپ میں پابندیاں مزید نرم کرنے کی منصوبہ بندی کرلی گئی ، امریکا میں اموات پر قابو نہیں پایا جاسکا اور صدر ٹرمپ کو ایک بار پھر بڑا یوٹرن لینا پڑگیا ہے۔

امریکی صدر نے ایک اور قلابازی کھائی ہے۔ منگل کو کہا تھا کہ کورونا وائرس ٹاسک فورس ختم کرنے جارہے ہیں مگر اسی روز ڈھائی ہزار اموات ہوئیں تو بدھ کو ناک رگڑنا پڑگئی۔

یوٹرن کے ماہر صدر ٹرمپ نے اب کورونا وبا کو جنگ عظیم دوم کے دوران پرل ہاربر پر جاپانی حملے اور سانحہ نائن الیون سے بھی زیادہ بھیانک تسلیم کیا ، انھوں نے کہا کہ ایسا حملہ کبھی نہیں ہوا۔ جو صدر ایک روز پہلے ٹاسک فورس ہی ختم کرنے پر تلے ہوئے تھے تنقید بڑھی تو اسی فورس میں اگلے ہفتے تک مزید 2 یا 3 افراد کو  شامل کرنے کا اعلان کردیا۔

صدر ٹرمپ کا کہنا ہے کہ انہیں اندازہ ہی نہیں تھا کہ وائٹ ہاوس کورونا وائرس ٹاسک فورس کس قدر مقبول ہے۔ یہ فورس اب غیر معینہ مدت تک  کام جاری رکھے گی ، اب اس کا ہدف حفاظتی اقدامات کو یقینی بناتے ہوئے امریکا کو دوبارہ کھولنا ہے اور اس کی توجہ ویکسین اور علاج کے طریقوں پر ہوگی۔ ملک میں آج بھی تقریبا 2 ہزار ہلاکتیں ہوئیں اور ابتک اموات تقریبا 74 ہزار ہوگئی ہیں۔

یورپ میں صورتحال مسلسل بہتر ہورہی ہے۔ برطانیہ میں پیر سے لاک ڈاؤن نرم کئے جانے اور گھروں میں رہنے کی ہدایت واپس لئے جانے کا امکان ہے، وزیراعظم بورس جانسن اتوار کو قوم سے خطاب میں روڈ میپ پیش کریں گے ، وہ بتائیں گے کہ کس طرح پابندیاں نرم کی جاسکتی ہیں۔ ملک میں بدھ کو کورونا کے مزید 649 مریض ہلاک ہوئے ہیں اور اموات 30 ہزار 76 ہوگئی ہیں۔

جرمن چانسلر اینگلا مرکل  نے کہا ہے کہ اسی ماہ دکانیں ، اسکول اور ریسٹورنٹس کھولنے کی اجازت دے دی جائے گی ، ملک میں چند روز پہلے بھی کچھ کاروبار کھولے جاچکے ہیں۔ جرمنی میں کورونا کے مزید 197 مریضوں نے دم توڑا ہے اور ہلاکتیں 7190 ہوچکی ہیں، بیلجئم نے بھی دیگر یورپی ممالک کی طرح اگلے ہفتے لاک ڈاؤن نرم کرکے دکانیں کھولنے کا پلان بنالیا ہے۔

فرانس نے کورونا وبا پر بڑی حد تک قابو پالیا ہے ، 278 نئی اموات کے بعد یہاں ہلاکتیں 25 ہزار 809 ہوچکی ہیں۔

ایران میں کورونا سے مزید 78 اموات ہوئی ہیں اور جاں بحق افراد کی تعداد 6 ہزار 418 ہوچکی ہے، تہران نے ملک میں تیار کی گئی 40 ہزار کورونا ٹیسٹ کٹس یورپ کے سب سے بڑے صنعتی ملک جرمنی بھیجی ہیں۔ سعودی عرب میں مزید 9 شہریوں کا انتقال ہوا اور اب تک 209 افراد جاں بحق ہوچکے ہیں، متحدہ عرب امارات میں مزید 11 شہریوں کی جان گئی اور کورونا وائرس سے اموات 157 ہوگئیں۔

ٹرینڈنگ

مینو