کورونا: اسپتال کب جائیں ؟ علاج کیسے ہوگا؟

محسن رضا

زبرنیوز ایکسکلوژو کی دوسری قسط : کورونا کا علاج کرنے کے پاکستانی امریکن ماہر ڈاکٹر عمران شریف بتارہے ہیں کہ جب مریض اسپتال پہنچتا ہے تو اس میں کیا علامات نوٹ کی جاتی ہیں ؟ علاج کیسے شروع کیا جاتا ہے ؟ اس میں مسائل کیا درپیش آتے ہیں اور ویکسین کب تک مارکیٹ میں آنے کا امکان ہے ؟ آئیں ان کی اہم گفتگو سنتے ہیں۔

پہلی قسط

وبا کے دور میں عام نزلہ یا بخار کو کورونا سمجھ کر ٹیسٹ کرانے کیلئے اسپتال جانا مناسب نہیں لیکن بخار اور نزلہ ہونے پر اطمینان سے بیٹھے رہنا بھی غلط ہے ، کورونا کی علامات کیا ہیں اور ٹیسٹ کب کرایا جانا چاہئے یہی اس وقت سب سے بڑا سوال ہے ، امریکا کے نامور پلمونولوجسٹس میں سے ایک ڈاکٹر عمران شریف نے زبر نیوز کو خصوصی گفتگو میں بتایا کہ کورونا کیا ہے ، اس بیماری کی علامات کیا ہیں اور کورونا ٹیسٹ کیلئے ڈاکٹر سے کب رجوع کیا جانا چاہئے ؟ آئیں ان کی گفتگو سنتے ہیں۔

ڈاکڑ عمران شریف ایم ڈی ، ایف سی سی پی ہیں اور پلمونری میڈیسن میں اسیپیشلسٹ مانے جاتے ہیں۔ کریٹیکل کیئر میڈیسن اور سلیپ میڈیسن بھی ان کی دلچپسی کے خاص شعبے ہیں۔ زبرنیوز سے بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ امریکا کی مختلف ریاستوں کے اسپتال کورونا سے نمٹنے کیلئے بالکل تیار نہیں تھے۔

ڈاکٹر عمران شریف کا تعلق کیلی فورنیا کے شہر سانتا اینا سے ہے ، وہ نہ صرف کورونا کے ریگلولر پیشنٹس دیکھتے ہیں بلکہ انٹینسیو کیئر اور ایمرجنسی شعبے میں بھی مریضوں کا معائنہ کرتے ہیں۔ انھوں نے 1991 میں ڈاؤ میڈیکل کالج سے ڈاکٹری کی تعلیم حاصل کی تھی اور 16 سال سے پریکٹس کر رہے ہیں۔

ٹرینڈنگ

مینو