پاکستان کو 5ہزار ٹن کینو ایران درآمد کرنے کی اجازت

محسن رضا

ایران نے دو طرفہ تجارت کو فروغ دینے کے لیے پاکستان کو 5 ہزار ٹن کینو درآمد کرنے کی اجازت دیدی ہے۔

کراچی میں ایران کے قائم مقام قونصل جنرل علی رضا سجادی نے خصوصی مراسلے کے ذریعے  اس بارے میں پاکستانی تاجروں کو باضابطہ طورپر آگاہ بھی کردیا ہے۔

پانچ ہزار ٹن کینو پاک ایران سرحد پر واقع مارکیٹ کے ذریعے ایران برآمد کئے جاسکیں گے ، اس سہولت سے آل پاکستان فروٹ اینڈ ویجی ٹیبل ایکسپورٹر ، امپورٹر اینڈ مرچنٹ اسوسی ایشن بھرپور فائدہ اٹھا سکے گی۔

ایران نے یہ اقدام وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کے حالیہ دورہ ایران کے بعد کیا ہے۔ توقع ظاہر کی جارہی ہے کہ وزیرخارجہ کے اس دورے سے دونوں برادر ملکوں کے تعلقات میں مزید بہتری آئے گی۔

پاکستان میں ایرانی سیب ، انگور اور کیوی کی مانگ بھی تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ ایرانی حکام کو توقع ہے کہ پاکستان ایرانی سیب کی قانونی طور پر درآمد کی اجازت دے گا۔ جس پر چار برس سے پابندی عائد ہے۔

ایرانی سیب افغانستان کے راستے پاکستان لائے جاتے ہیں جس کے سبب انکی قیمت بڑھ جاتی ہے اور دو بار لوڈنگ اور ان لوڈنگ  کے سبب داغ لگنے سے کئی پھل ضائع ہوجاتے ہیں۔

افغانستان سے لائی جانیوالی کھانے پینے کی اشیا ٹیکس سے مبرا ہیں جبکہ دیگر ممالک سے ایسی اشیا لانے پر سترہ فیصد فی کلوگرام  ٹیکس دینا پڑتا ہے، اسمگلنگ کے زریعے ٹیکس بچا کر قیمت میں کمی لائی جاتی ہے اور اس طرح پاکستان میں مقامی طور پر اگنے والے سیب کی قیمت سے بھی کم قیمت پر یہ پھل بیچا جاتا ہے جس سے مقامی کسانوں کو نقصان کا سامنا ہوتاہے۔

خلیجی میڈیا نے کسٹم حکام کے حوالے سے بتایا ہےکہ سن دوہزار انیس اور بیس کےدوران55,362.403 ٹن سیب طورخم بارڈر سے درآمد کئے گئے تھے۔

ٹرینڈنگ

مینو