ٹیک سمٹ دیگر شہروں میں بھی کرائیں گے، قونصل جنرل

قرۃ العین

کیلی فورنیا میں پاکستان کے قونصل جنرل جبار میمن نے کہا ہے کہ پاکستان میں آئی ٹی سیکٹر کو فروغ دینا وزیراعظم عمران خان کی اولین ترجیح ہے اور اسی خواب کو عملی جامہ پہنانے کیلئے انہوں نے پاکستان اور امریکا کے درمیان انفارمیشن ٹیکنالوجی کوریڈور قائم کردیا ہے۔

جبار میمن نے یہ بات ڈریپر یونیورسٹی میں پاکستان ٹیک سمٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہی جس میں نوجوان انٹرپرینئورز کی بڑی تعداد شریک تھی۔

Posted by Zabarnews Tahir Humayun on Saturday, February 15, 2020

Posted by Zabarnews Tahir Humayun on Saturday, February 15, 2020

قونصل جنرل نے کہا کہ انہوں نے پچھلے برس وعدہ کیا تھا کہ سیلیکون ویلی میں ایسا سمٹ کرائیں گے اور یہ قابل اطمینان ہے کہ 2020 کے آغاز ہی میں اپنی نوعیت کا یہ اہم سمٹ ممکن ہوگیا۔

جبار میمن نے بتایا کہ وہ ایسے ٹیک سمٹ امریکا کے دیگر شہروں میں بھی منعقد کرائیں گے تاکہ پاکستانی انٹرپرینئورز کو زیادہ سے زیادہ مواقع مل سکیں اور وطن میں سرمایہ کاری بڑھائی جاسکے۔ قونصل جنرل کا کہنا تھا کہ سیلیکون ویلی کی کئی کمپنیوں نے پاکستان میں اپنے دفاتر کھولے ہیں ،ان میں کیپ ٹرکنگ بھی شامل ہے مگر جو مواقع پاکستان میں موجود ہیں ان کی بنا پر وہ کہہ سکتے ہیں کہ ابھی ان کمپنیوں کی تعداد میں کئی گنا اضافہ ہونا چاہیے۔ نام لیے بغیر جبار میمن نے بتایا کہ ای کامرس سے متعلق دنیا کی ایک بہت بڑی کمپنی جلد پاکستان میں اپنا بزنس شروع کرے گی۔

جبار میمن نے شرکا کو بتایا کہ پاکستان میں5 لاکھ سے زائد آئی ٹی پروفیشنلز ہیں جبکہ ہر سال 20 ہزار سے زائد آئی ٹی پروفیشنلز فارغ التحصیل ہورہے ہیں، پاکستان میں بزنس کیلئے سہولتیں فراہم کی گئی ہیں، آئی ٹی اور اس سے منسلک صنعت پر انکم ٹیکس نہیں ہے۔ 100 فیصد اونرشپ اور منافع کی 100 فیصد رقم واپس اپنے وطن لے جانے کی بھی اجازت ہے۔ جبار میمن کا کہنا تھا کہ پاکستان میں سیکیورٹی کی صورتحال نارمل ہو چکی ہے، برطانیہ کے شہزادہ ولیم اور ان کی اہلیہ کیٹ مڈلٹن کا دورہ پاکستان اس کی مثال ہے، شمالی علاقہ جات کے دورے کو خود شہزادہ ولیم نے بھی یادگار قرار دیا، یہ کہا جاسکتا ہے کہ پاکستانی غیرملکیوں کے استقبال کیلئے اپنے بازو کھولے ہوئے ہیں۔

تقریب سے ڈپٹی قونصل جنرل شعیب احمد اور دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔  انہوں نے امید ظاہر کی کہ پاکستانی نوجوان سیلی کون ویلی سے حاصل تجربات کو اپنے وطن کی ترقی کیلئے استعمال کریں گے۔

مقررین کا کہنا تھا کہ ناکامی کا ڈر کبھی ترقی کی راہ میں حائل نہیں ہونا چاہئے۔

ٹرینڈنگ

مینو