شہبازشریف کا 14روزہ جوڈیشل ریمانڈ

لاہور کی احتساب عدالت نے منی لانڈرنگ کیس میں نون لیگ کے صدر اور قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کو 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیجنے کا حکم دے دیا۔

شہبازشریف اور ان کے اہلخانہ کے خلاف منی لانڈرنگ ریفرنس کی سماعت کے دوران نیب نے شہباز شریف کے جسمانی ریمانڈ کی درخواست کی، احتساب عدالت نے نیب پراسیکیوٹر سے پوچھا کہ نیب کو آج کس بنیاد پر جسمانی ریمانڈ چاہئے ؟

نیب پراسکیوٹر نے بتایا کہ شہباز شریف کو تحریری سوال دیئے گئے لیکن انھوں نے جواب نہیں دیا، شہباز شریف نے کہا کہ انھیں آخری پیشی سے پہلے 2 سوالنامے دیئے گئے ، ان کے جواب ریفرنس کا حصے ہیں۔ 26 اکتوبر 2018 کو آمدن سے زائد اثاثہ کیس میں انکوائری شروع ہوئی، انھوں نے جو قرض لیا اس کا مکمل ریکارڈ لکھ کر دیا جاچکا ہے۔

نیب پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ شہباز شریف کسی سوال کا جواب دینے کو تیار نہیں، کیا وہ تفتیش ہی نہ کریں۔ عدالت نے جسمانی ریمانڈ کی درخواست مسترد کرتے ہوئے شہباز شریف کو جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بھیجنے کا حکم دے دیا۔

ٹرینڈنگ

مینو