حکومت آمرانہ اختیار چاہتی ہے، بلاول بھٹو

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ ایف اے ٹی ایف کے نام پر آمرانہ اختیارات حاصل کرنے کی کوشش کی گئی۔ جب پیپلزپارٹی ایف اے ٹی ایف سے کہے گی کہ انھوں نے پارلیمنٹ میں بات نہیں کرنے دی تو آپ کیا کریں گے۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کے دوران بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ قانون سازی پر سینیٹ اور قومی اسمبلی کو اعتماد میں نہیں لیا گیا، حکومت عوام کو بے وقوف بنارہی ہے۔ تحریک انصاف کے وزیراعظم اسٹے آرڈر کے پیچھے چھپ رہے ہیں، مالم جبہ ، بی آر ٹی ، چینی اور آٹا چوری پر این آر او دلوایا گیا۔ جسٹس مقبول باقر کے فیصلے کے بعد نیب اور جمہوریت ساتھ نہیں چل سکتے۔

ان کا کہنا تھا کہ فیٹف اور نیب قوانین کو این آر او سے نتھی کیا جارہا ہے، حکومت فیٹف کا نام لے کر کسی شہری کو 6 ماہ تک لاپتہ کرسکتی ہے، اپوزیشن اس کی اجازت نہیں دے گی۔

بلاول بھٹو نے وزیراعظم کے مشیروں پر آمدن سے زائد اثاثوں کا الزام لگایا اور کہا کہ عمران خان آج بھی مشیروں کی کرپشن کا تحفظ کر رہے ہیں، نیب کو شہزاد اکبر کے خلاف بھی آمدنی سے زائد اثاثوں کا کیس بنانا چاہئے، انھوں نے 2 برس تک بیرون ملک جائیداد ظاہر نہیں کی، چیئرمین پیپلزپارٹی نے وزیراعظم کے تمام معاونین خصوصی سے اثاثے ظاہر کرنے کا مطالبہ کیا۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ این آر او این آر او کرکے کلبھوشن کو دیئے گئے اصل این آر او کو چھپانے کی کوشش ہورہی ہے۔

ٹرینڈنگ

مینو