توہین رسالت: بنگلور میں ہنگامے،3 ہلاک، ویڈیوز

فیس بک پر توہین رسالت کے بعد بھارتی ریاست کرناٹک کے شہر بنگلور میں ہنگامے پھوٹ پڑے، پولیس نے مظاہرین پر فائرنگ کرکے 3 افراد کو ہلاک اور 150 سے زائد کو گرفتار کرلیا۔ متاثرہ علاقوں میں کرفیو نافذ کردیا گیا۔

مقامی افراد کے مطابق کانگریس کے رکن اسمبلی سری ویناس مرتھی کے بھتیجے نے فیس بک پر توہین آمیز پوسٹ کی تھی، خبر پھیلتے ہی لوگ مشتعل ہوگئے، مظاہرین نے ایم ایل اے کا گھر اور درجنوں گاڑیاں پھونک دیں۔

مشتعل افراد نے پولیس پر جانب داری کا الزام لگا کر 2 تھانوں پر بھی حملہ کیا، اس دوران اہلکاروں نے فائرنگ کرکے 3 افراد کی جان لے لی۔

ہنگاموں کے بعد بنگلور کے علاقوں ڈی جی ہللی اور کے جی ہللی میں کرفیو نافذ کردیا گیا ہے جبکہ شہر بھر میں دفعہ 144 نافذ ہے۔

پرتشدد احتجاج کی تحقیقات جاری ہیں ، ملزمان کی شناخت کیلئے سی سی ٹی وی کیمروں کی مدد لی گئی ہے، پولیس نے فیس بک پر پوسٹ کرنے والے ملزم کو بھی حراست میں لے لیا ہے۔

بھارت کے معروف عالم دین مولانا صغیر احمد نے لوگوں سے پرامن رہنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ پولیس نے ملزم کو سزا دینے کا وعدہ کیا ہے، اس لئے قانون ہاتھ میں نہ لیا جائے۔

ٹرینڈنگ

مینو