نیب کو تالا لگائیں، چیئرمین گھر جائیں، بلاول

فروہ شمشاد

چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی کو لانے والے اگر کرپشن فری پاکستان بنانا چاہتے تھے تو کیا آج پاکستان کرپشن فری ہوگیا ؟ جب سلیکٹڈ حکومت لائی جاتی ہے تو جمہوریت ، معیشت اور معاشرے کا یہی حال ہوتا ہے جو آج ہے، پی ٹی آئی والے خود تسلیم کرتے ہیں کہ پنجاب میں کرپشن ہورہی ہے۔ عمران خان کا کچن چلانے کیلئے کرپشن کی جارہی ہے۔

لاہور میں پریس کانفرنس کے دوران بلاول بھٹو نے کہا کہ ٹرانبسپیرنسی انٹرنیشنل نے اسے کرپٹ ترین حکومت قرار دیا، پھر ایسی حکومت لانے کا کیا فائدہ ہوا۔ نیب کی سیاست میں مداخلت ہے، نیب حکومت کے اسکینڈلز پر کام نہیں کررہا، نیب کو مالم جبہ ، بلین ٹری ، بی آرٹی اور کابینہ ارکان کی دوہری شہریت پر ایکشن لینا چاہئے۔

پیپلزپارٹی کے سربراہ نے چیئرمین نیب کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ اگر شرم اور حیا ہے تو وہ استعفی دے کر گھر چلے جائیں اور نیب کو تالا لگادیا جائے، نیب حکام کے ہاتھوں گرفتار تمام افراد کو رہا کیا جائے۔

انھوں نے پنجاب میں حکومتی ٹیم کو نالائق اور نااہل قرار دیا اور کہا کہ حکومت نے پنجاب کی زراعت تباہ کردی ، بلاول بھٹو نے طبی عملے کو رسک الاونس دینے کا مطالبہ کیا اور کہا کہ سندھ حکومت الاونس دے سکتی ہے تو پی ٹی آئی حکومت کیوں نہیں دے سکتی۔

بلاول بھٹو نے بتایا کہ ان کی شہبازشریف سے بات ہوئی ہے ، اپوزیشن لیڈر شہبازشریف کی صحت پر سیاست نہیں کرنی چاہئے، وہ کینسر کے مریض ہیں۔ اپوزیشن کی کمیٹی بنادی ہے اور اے پی سی پر کام جاری ہے۔

چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ قومی اسمبلی کے اسپیکر اور ڈپٹی اسپیکر غیرقانونی طریقے سے ایوان چلارہے ہیں، پیپلزپارٹی اے پی سی میں دونوں کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی تجویز دے گی۔

ٹرینڈنگ

مینو