کورونا: لاشوں کی تجارت ! نوسرباز سرگرم

فروہ شمشاد

پاکستان میں کورونا وائرس  جاں 3 ہزار 382 افراد کی جان لے چکا ہے ، مریضوں کی تعداد لگ بھگ ایک لاکھ 72 ہزار ہوچکی ہے، بیماروں کی بڑھتی تعداد کے ساتھ مسائل بھی بڑھتے جارہے ہیں ، ڈاکٹروں کیلئے کئی کئی گھنٹے حفاظتی لباس پہننا مشکل ہورہا ہے تو اسپتالوں میں نوسربازی بھی عروج پر ہے ، میتوں کی وصولی کیلئے لاکھوں روپے مانگنے اور عام مریضوں کو کورونا وارڈ میں ڈالنے کی شکایات سامنے آرہی ہیں، کئی افراد ایسے ہیں جو 14 دن تک روزانہ ڈیڑھ لاکھ روپے اسپتالوں کو دینے کے باوجود اپنے پیاروں کی زندگی بچانے میں ناکام ہورہے ہیں، لاہور سے زبرنیوز کی نمائندہ فروہ شمشاد کی خصوصی رپورٹ

وبا کے دور میں عام نزلہ یا بخار کو کورونا سمجھ کر ٹیسٹ کرانے کیلئے اسپتال جانا مناسب نہیں لیکن بخار اور نزلہ ہونے پر اطمینان سے بیٹھے رہنا بھی غلط ہے ، کورونا کی علامات کیا ہیں اور ٹیسٹ کب کرایا جانا چاہئے یہی اس وقت سب سے بڑا سوال ہے ، امریکا کے نامور پلمونولوجسٹس میں سے ایک ڈاکٹر عمران شریف نے زبر نیوز کو خصوصی گفتگو میں بتایا کہ بیماری کی علامات کیا ہیں اور کورونا ٹیسٹ کیلئے ڈاکٹر سے کب رجوع کیا جانا چاہئے ؟ آئیں ان کی گفتگو سنتے ہیں۔

زبرنیوز ایکسکلوژو کی دوسری قسط : کورونا کا علاج کرنے کے پاکستانی امریکن ماہر ڈاکٹر عمران شریف بتارہے ہیں کہ جب مریض اسپتال پہنچتا ہے تو اس میں کیا علامات نوٹ کی جاتی ہیں ؟ علاج کیسے شروع کیا جاتا ہے ؟  آئیں ان کی اہم گفتگو سنتے ہیں۔

زبرنیوز ایکسکلوژو کی تیسری قسط میں کورونا مریضوں کا علاج کرنے کے امریکی ماہر ڈاکٹر عمران شریف بتا رہے ہیں کہ طبی عملے کو اپنا تحفظ کیسے کرنا چاہئے ، لباس کیسا ہوتا ہے اور اسے پہننے کا طریقہ کیا ہے۔ آئیں جانتے ہیں

کورونا وبا پورے ملک میں پھیل چکی ہے ، اموات بڑھتی جارہی ہیں اور مریضوں میں بھی مسلسل اضافہ ہو رہا ہے، اس صورتحال میں میل جول کم کرنے اور فیس ماسک کا استعمال کرکے خطرات کم کئے جاسکتے ہیں۔

ٹرینڈنگ

مینو