یوم شہادت حضرت علی ، جلوسوں پر پابندی

اسرار خان ، نغمان شاہ ، اعجاز امتیاز،عدنان اطہر

تاریخ میں پہلی بار کراچی اور لاہور سمیت ملک بھر میں یوم شہادت حضرت علی کے مرکزی جلوسوں پر پابندی لگادی گئی ، لاہور میں گامے شاہ اور مبارک حویلی سمیت اہم امام بارگاہیں سیل کردی گئیں۔

لاہور کا مرکزی جلوس موچی دروازے میں مبارک حویلی سے برآمد ہوتا ہے ، اب نہ صرف مبارک حویلی سیل ہے بلکہ موچی دروازے جانے والا راستہ بھی بند کردیا گیا ہے، جلوس کا اختتام امام بارگاہ کربلا گامے شاہ پر ہوتا ہے لیکن وہاں بھی کنٹینر لگا دیئے گئے ہیں۔ محکمہ داخلہ پنجاب نے صرف گھروں اور امام بارگاہوں میں ایس او پیز پر عمل کرتے ہوئے مجالس کی اجازت دی ہے۔

لاہور میں اندرون شہر 19 رمضان کا جلوس برآمد ہوا تھا اور عزاداروں نے ماتم داری بھی کی تھی۔

کراچی کے مختلف امام بارگاہوں میں شہادت حضرت علی علیہ السلام کی مناسبت سے مجالس جاری ہیں ، اہل تشیع تنظیموں نے سندھ حکومت کو تجویز پیش کی ہے کہ ایس او پیز پر عمل کرتے ہوئے 313 افراد کو مرکزی جلوس میں شرکت کی اجازت دی جائے تاہم صوبائی حکومت نے مذہبی اجتماعات اور جلوسوں پر پابندی کا نوٹی فکیشن اب تک واپس نہیں لیا ہے۔

خیبرپختونخوا حکومت نے یوم شہادت حضرت علی کے تمام جلوسوں پر پابندی کا نوٹی فکیشن جاری کیا ہے ، اس میں کہا گیا ہے کہ امام بارگاہوں میں ایس او پیز پر عمل کرکے مجالس کا اہتمام کیا جاسکتا ہے۔ بلوچستان اور آزاد کشمیر حکومتوں نے بھی دیگر صوبوں کی طرح جلوسوں پر پابندی عائد کی ہے۔ بلوچستان میں شیعہ کانفرنس نے اعلان کیا ہے کہ جلوس 15 مئی کو رات 9 بجے برآمد ہوکر امام بارگاہ ناصر آباد میں اختتام پذیر ہوگا۔ عزاداروں سے کہا گیا ہے کہ وہ حکومت کے جاری کردہ ایس او پیز پر عمل یقینی بنائیں۔

یوم شہادت حضرت علی کے موقع پر ہر سال 21 رمضان کو چھوٹے بڑے شہروں میں شبیہ علم و تابوت کے جلوس برآمد ہوتے ہیں جن میں لاکھوں عزادار شرکت کرتے ہیں۔

حضرت علی کو مسجد کوفہ میں ابن ملجم نے 19 رمضان کو نمازفجر کی ادائیگی کے دوران سر پر تلوار مار کر زخمی کیا تھا اور آپ کی شہادت 21 رمضان کو ہوئی تھی، آپ کا روضہ نجف الشرف میں ہے۔

حضرت علی پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے چچا حضرت ابوطالب کے بیٹے تھے ، حضرت علی کی شادی پیغمبر اسلام کی بیٹی حضرت بی بی فاطمہ سے ہوئی تھی۔  امام حسن ، امام حسین اور حضرت عباس آپ کے بیٹے تھے۔

ٹرینڈنگ

مینو