نواز شریف کا جانا نظام کی تضحیک، ہائیکورٹ

محمد عثمان

اسلام آباد ہائیکورٹ کو بتایا گیا ہے کہ سابق وزیراعظم نوازشریف نے ایک بار پھر وارنٹس گرفتاری وصول کرنے سے انکار کردیا ہے، عدالت نے ریمارکس دیئے کہ ملزم نوازشریف کو پتہ ہے وہ سارے نظام کو شکست دے کر گیا اور وہاں بیٹھ کر پاکستانی نظام پر ہنس رہا ہوگا۔

جسٹس محسن اختر کیانی نے نوازشریف کی سزا کے خلاف اپیلوں پر سماعت کی، اس دوران ایڈیشنل اٹارنی جنرل طارق کھوکھر نے نوازشریف کے وارنٹ گرفتاری کی تعمیل نہ ہونے سے متعلق رپورٹ پیش کی۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ  لندن ایون فیلڈ اپارٹمنٹس پر ہائی کمیشن کا نمائندہ 2 بار وارنٹ دینے گیا لیکن وہاں موجود شخص نے وصولی سے انکار کردیا۔

جج نے ریمارکس دیئے کہ ہم نے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کئے ، دیکھنا ہے کہ کیا جان بوجھ کر کارروائی سے فرار اختیار کیا جا رہا ہے؟

جسٹس محسن اختر کیانی نے کہا کہ کل نوازشریف واپس آکر یہ نہیں کہہ سکتے کہ انھیں وارنٹ گرفتاری کا علم نہیں تھا یا انھیں موقع نہیں دیا گیا، ان کا بیرون ملک جانا پورے نظام کی تضحیک ہے، آئندہ وفاقی حکومت کو بھی خیال رکھنا چاہئے کہ کسی کو کیسے بیرون ملک جانے دینا ہے یا نہیں؟

عدالت نے پاکستانی ہائی کمیشن کے قونصلر اتاشی راو عبدالحنان کا ویڈیو لنک کے ذریعے بیان ریکارڈ کرانے کا حکم دیا اور کہا کہ 7 اکتوبر کی سماعت پر دفتر خارجہ کے افسر مبشر احمد کا بیان بھی ریکارڈ ہوگا۔

عدالت نے ایون فیلڈ ریفرنس میں نوازشریف کی ضمانت منسوخی کی درخواست سماعت کیلئے منظور کرلی اور حکومت سے 7 اکتوبر تک جواب طلب کرلیا۔ ہائی کورٹ نے ایون فیلڈ اور العزیزیہ ریفرنسز میں نوازشریف کی اپیلوں پر سماعت بھی 7 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

ٹرینڈنگ

مینو