موٹروے زیادتی کیس، ملزم شفقت گرفتار

اسرار خان

لاہور موٹروے زیادتی کیس میں متاثرہ خاتون نے گرفتاری دینے والے وقار الحسن کو پہچاننے سے انکار کردیا جبکہ پولیس نے وقار کی نشاندہی پر ملزم شفقت کو گرفتار کرلیا ہے اور ملزم نے پولیس کے سامنے جرم کا اعتراف کرلیا ہے۔

ذرائع کے مطابق متاثرہ خاتون کو وقار الحسن کی تصاویر واٹس ایپ کی گئی تھیں۔ زیادتی کی شکار خاتون کا کہنا ہے کہ وہ وقار کو نہیں پہچانتیں۔

وقار الحسن نے پولیس کو بتایا کہ مرکزی ملزم عابد اپنے دوست شفقت کے ساتھ مل کر وارداتیں کرتا ہے، ذرائع کے مطابق پولیس نے وقار سے پوچھ گچھ کے بعد لاہور ، شیخوپورہ اور دیگر علاقوں میں چھاپے مارے، اس دوران بہاولنگر کے رہاٗشی شفقت کو گرفتار کرلیا گیا، پولیس حکام نے امکان ظاہر کیا کہ مفرور ملزم عابد کا ساتھی شفقت ہی زیادتی کیس میں ملوث ہے اور بہت جلد عابد کو بھی گرفتار کرلیا جائے گا۔ ملزم عابد کے بہنوئی اور 3 رشتے دار پولیس حراست میں ہیں جن سے تفتیش کی جا رہی ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار اور آئی جی انعام غنی نے 2 دن پہلے پریس کانفرنس میں عابد علی اور وقار الحسن کو ملزم بتایا تھا اور ان کی اطلاع دینے والے کو 25، 25 لاکھ روپے انعام دینے کا اعلان کیا تھا۔

ملزم وقار الحسن نے سی آئی اے ماڈل ٹاؤن لاہور میں خود اپنی گرفتاری پیش کی اور پولیس کو بتایا کہ اس کا زیادتی سے کوئی تعلق نہیں۔ وقار کے سالے عباس نے شیخوپورہ میں خود کو پولیس کے حوالے کیا تھا۔

ذرائع کے مطابق ملزم وقار نے پولیس کو بتایا تھا کہ اس کا سالہ عباس اس کے نام پر جاری سم استعمال کر رہا تھا۔

ٹرینڈنگ

مینو