صبیحہ خانم چل بسیں، فلمی کریئر پر نظر،ویڈیو

طاہر عباس (بیوروچیف شمالی امریکا)

لالی وڈ کے سنہری دور کی معروف اداکارہ اور سلور اسکرین کی گولڈن گرل کے نام سے مشہور صبیحہ خانم 84 برس کی عمر میں مداحوں کو جدائی کا غم دے گئیں، ان کا انتقال امریکا کی ریاست ورجینیا میں ہوا ، وہ بلڈپریشر ، شوگر اور گردوں کے مرض میں مبتلا تھیں۔

مختار بیگم 16 اکتوبر 1935 کو گجرات میں پیدا ہوئیں ، ڈرامہ نگار اور شاعر نفیس خلیلی نے مختار بیگم کو صبیحہ خانم کا نام دیا اور فلم ڈائریکٹر مسعود پرویز سے درخواست کرکے فلم بیلی میں کردار دلوایا ، اس کے بعد انور کمال پاشا نے انھیں فلم دو آنسو میں ہیروئن نوری کا کردار دیا ، صبیحہ خانم نے انور کمال پاشا ہی کی فلم گمنام سے نام کمایا ، یہ فلم باکس آفس میں انتہائی کامیاب رہی، اس فلم کا گانا پائل میں گیت ہیں چھم چھم کے انتہائی مقبول ہوا۔

صبیحہ خانم نے انور کمال پاشا کی فلم سرفروش میں بہترین ادکاری کی تو ان کے نام کا ڈنکا بجنے لگا، اس کے بعد ان کی فلموں سات لاکھ، چھوٹی بیگم، ناجی، حسرت، دامن، سوال، وعدہ، ایاز، عشق لیلیٰ ، اک گناہ اور سہی اور مکھڑا نے دھوم مچا دی تھی۔

یہی وہ دور تھا جب اس وقت کے نامور ہیرو سنتوش کمار (موسیٰ رضا) اداکارہ صبیحہ خانم کے عشق میں گرفتار ہوئے، صبیحہ سنتوش کمار کی دوسری بیوی بنیں۔

صبیحہ نے مشہور ایکشن ہیرو سدھیر کے ساتھ فلم  دلّا بھٹی میں کام کیا ، یہ فلم سپر ڈپر ہٹ ہوئی۔ اس فلم کا یہ گیت بہت مشہور ہوا۔

فلم سوال میں بھی ان کی اداکاری شاندار تھی ، آئیں اس فلم کا گیت لٹ الجھی سلجھا جارے بالم سنتے ہیں۔

انھیں 6 بار نگار ایوارڈ سے نوازا گیا ، یہ ایوارڈ ان کی فلموں سات لاکھ، شکوہ ، دیور بھابھی ، اک گناہ اور سہی ، سنگ دل اور تیس سالہ فلمی کریئر پردیئے گئے۔ انھیں اک گناہ اور سہی میں شاندار اداکاری پر تاشقند فلم فیسٹول میں بہترین اداکارہ کا ایوارڈ دیا گیا، حکومت نے صبیحہ خانم کو 1987 میں پرائڈ آف پرفارمنس سے بھی نوازا، آئیں مشہور فلم ایاز میں ان پر فلمایا گیا گیت رقص میں ہے سارا جہاں سنتے ہیں۔

اداکارہ صبیحہ خانم نے بطور گلوکارہ بھی شہرت پائی، ان کی آواز میں جگ جگ جئے میرا پیارا وطن آج بھی زبان زد خاص و عام ہے۔

صبیحہ خانم سنتوش کمار کی موت کے بعد امریکا چلی گئی تھیں، انھیں شکوہ تھا تو صرف یہ کہ پاکستان میں سینئر فنکاروں کی قدر نہیں کی جاتی۔

ٹرینڈنگ

مینو