لاہور موٹروے پر زیادتی، ملزمان کے خاکے تیار

اسرار خان

لاہور کے علاقے گجر پورہ میں موٹر وے کے قریب خاتون سے اجتماعی زیادتی کے الزام میں 12 مشتبہ افراد کو دھر لیا گیا۔ ملزمان کے خاکے بھی تیار کرلئے گئے ہیں۔

گوجرانوالہ کی رہائشی ثنا ڈیفنس میں مقیم اپنی بہن سے ملنے لاہور آئی تھیں، واپسی پر ان کی گاڑی میں پیٹرول ختم ہوگیا، انھوں نے اپنے رشتے دار سردار شہزاد کو مدد کیلئے بلایا، اسی دوران 2 ڈاکو گاڑی کے شیشے توڑ کر انھیں کیرول گھاٹی کے جنگل میں لے گئے اور 2 بچوں کے سامنے گن پوائنٹ پر زیادتی کا نشانہ بنایا۔

سردار شہزاد پہنچے تو انھیں گاڑی کے شیشے پر خون لگا ملا، پولیس نے سردار شہزاد کے بیان پر مقدمہ درج کرلیا اور سیف سٹی کیمروں کے ذریعے ملزمان کی تلاش کا دعوی کیا ہے ، ایف آئی آر کے مطابق ڈاکو خاتون سے ایک لاکھ روپے ، سونے کے 2 کڑے ، بریسلٹ اور 3 اے ٹی ایم کارڈز لے کر فرار ہوگئے۔

متاثرہ خاتون کا کہنا ہے کہ وہ ملزمان کو شناخت کرسکتی ہیں ، پولیس نے بھی ملزمان کے خاکے تیار کرلئے ہیں اور ابتدائی میڈیکل رپورٹ میں خاتون سے زیادتی ثابت ہو گئی ہے۔

ترجمان موٹر وے پولیس کا کہنا ہے کہ افسوسناک واقعہ موٹروے پولیس کی حدود میں نہیں ہوا، کیرول گھاٹی اور تھانہ گجر پورہ کا علاقہ موٹروے پولیس کی حدود میں نہیں ہے، رنگ روڈ اور لاہور سیالکوٹ موٹروے پولیس کے پاس نہیں۔ وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار نے میڈیا پر شور مچنے کے بعد واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی سے رپورٹ طلب کرلی ہے۔

ٹرینڈنگ

مینو