متحدہ کارا سے تعلق ، رقم ملتی رہی، محمد انور

متحدہ قومی موومنٹ لندن کے سابق رہنما محمد انور نے ایم کیو ایم اور بھارتی خفیہ ایجنسی را کے تعلقات بے نقاب کردیئے، انھوں نے تصدیق کی ہے کہ متحدہ قومی موومنٹ بھارت سے رقوم لیتی رہی ہے۔

ایک انٹرویو میں محمد انور نے دعویٰ کیا کہ ندیم نصرت نے انھیں 90 کی دہائی میں بھارتی سفارتکار سے ملوایا، ندیم نصرت نے بتایا کہ مجھے بھارتی سفارتکار سے تنہائی میں ملنا ہوگا لیکن میں نے کہا آپ کو بھی ساتھ ہونا چاہئے ، شام سات بجے ہم دونوں ملاقات کے مقام پر پہنچے، محمد انور کے مطابق انھوں نے بھارتی سفارتکار کو بتایا کہ وہ ندیم نصرت کی موجودگی میں معاملات پر بات کرنا چاہتے ہیں، بھارتی سفارت کار نے کہا کہ انھیں حکم ملا ہے کہ صرف تنہائی میں بات کی جائے، آدھے گھنٹے بعد سفارتکار کو اجازت ملی اور گفتگو شروع ہوئی۔ انھوں نے کہا کہ متحدہ کو بھارت سے فنڈز ملتے رہے ہیں۔

محمد انور نے بتایا کہ انھوں نے وہ کیا جو ان سے کہا گیا ، پارٹی رہنماوں نے ان کے بارے میں غلط تاثر پھیلایا ، انھیں ایسا بنا کر پیش کیا گیا جیسے صرف وہ برے ہوں، ذمے داری تمام اہم عہدیداروں پر عائد ہوتی ہے کیونکہ فیصلے سب کی مشاورت سے کئے جاتے تھے۔

محمد انور کا کہنا تھا کہ کراچی میں متحدہ رہنما خود کو پاک صاف کہتے ہیں لیکن وہ شہر میں قتل و غارت گری اور تباہی کے ذمے دار ہیں۔ محمد انور نے بتایا کہ وہ کراچی کی قیادت کے بارے میں بھی حکام کو سب کچھ بتانے پر تیار ہیں۔

انسداد دہشت گردی عدالت نے ڈاکٹر عمران فاروق قتل کیس میں الطاف حسین، افتخار حسین اور کاشف کامران کے ساتھ محمد انور کے بھی دائمی وارنٹ جاری کئے ہیں، محمد انور کا دعویٰ ہے کہ ان کا اس قتل سے کوئی تعلق نہیں اور وہ کبھی خالد شمیم (مجرم) سے نہیں ملے ، انھوں نے کہا کہ سابق گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد کو بھی قتل کیس میں شامل تفتیش کیا جانا چاہئے۔ محتدہ بانی نے ڈاکٹر عمران فاروق کو معطل کردیا تھا اور ان کی تذلیل کی تھی البتہ وہ ان کا احترام کرتے تھے۔

ٹرینڈنگ

مینو