آیا صوفیہ مسجد ،86 برس بعد نماز جمعہ، ویڈیو

ویب ڈیسک

ترکی کی 1500 برس پرانی تاریخی صوفیہ مسجد میں 86 برس بعد نماز جمعہ ادا کرنے کیلئے لوگوں کا ہجوم لگ گیا، ترک صدر رجب طیب اردوان نے نماز ادا کی اور تلاوت کلام پاک بھی کی۔

ترک صدر نے چھٹی صدی میں بازنطینی بادشاہ جسٹنیئن اول کے دور میں بنائی گئی عمارت کو ایک بار پھر مسجد بنانے کا انتخابی وعدہ پورا کردیا۔

استنبول کی معروف جامع مسجد آیا صوفیہ میں نماز جمعہ سے پہلے ترک صدر نے تلاوت کلام پاک کی سعادت حاصل کی، درود و سلام کا بھی اہتمام کیا گیا۔

مسجد کے اندر تقریبا ایک ہزار افراد کو  نماز کی اجازت دی گئی لیکن عمارت کے اطراف ہزاروں افراد نے نماز پڑھی۔

اعلی حکومتی شخصیات کی موجودگی کے باعث مسجد کے اندر اور باہر سخت سیکیورٹی انتظامات کئے گئے تھے۔

آیا صوفیہ کی عمارت 1500 برس پرانی ہے اور تقریبا 1000 سال تک یہاں گرجا گھر تھا۔

1353 میں سلطنت عثمانیہ نے اسے مسجد میں تبدیل کیا لیکن 1934 میں مصطفیٰ کمال اتاترک نے اسے میوزیم بنادیا، یہاں ہر سال تقریبا 30 لاکھ سیاح آتے ہیں۔

یہ عمارت اقوام متحدہ کی ورلڈ ہیریٹیج فہرست میں شامل ہے اور رجب طیب اردوان نے اپنی انتخابی مہم کے دوران اسے دوبارہ مسجد بنانے کا وعدہ کیا تھا۔

ترک عدالت نے عمارت سے متعلق کیس کا فیصلہ 10 جولائی 2020 کو سنایا اور صوفیہ کی میوزیم کی حیثیت ختم کردی، کونسل آف اسٹیٹ کا فیصلہ آتے ہی ترک صدر نے میوزیم کو مسجد میں تبدیل کرنے کے حکم نامے پر دستخط کردیئے تھے۔

ٹرینڈنگ

مینو