کپتان نے ایمرجنسی لینڈنگ کانہیں کہا، حکومت

کراچی میں طیارہ حادثے کی تحقیقات جاری ہیں ، اب انکشاف کیا گیا ہے کہ طیارے میں ایمرجنسی لینڈنگ یا کسی اور ہنگامی حالت کا اعلان نہیں کیا گیا تھا، پی آئی اے نے جاں بحق افراد کی تدفین کیلئے ورثا کو فی کس 10 لاکھ روپے دینے کا اعلان کیا ہے۔

ذرائع کے مطابق پائلٹ نے پہلی بار طیارہ لینڈ کرانے کی کوشش کی تو لینڈنگ گیئرز بند تھے۔ اسی دوران جہاز کے انجن رن وے سے ٹکرائے اور آگ بھڑکی ، کپتان دوبارہ جہاز فضا میں بلند کرنے میں کامیاب ہوگیا لیکن دوسری بار لینڈنگ کی کوشش میں طیارہ ماڈل کالونی میں گر کر تباہ ہوگیا۔

زخمی محمد زبیر نے بتایا کہ جہاز میں ہنگامی صورتحال سے آگاہ کرنے کیلئے کوئی اعلان نہیں کیا گیا تھا، پہلی بار لینڈنگ میں ناکامی پر ایسا لگا جیسے پائلٹ ویرانے میں لینڈنگ چاہتا تھا لیکن جہاز پہلے ہی گر گیا۔

وزیرہوابازی غلام سرور خان نے سی ای او پی آئی اے ارشد ملک کے ساتھ پریس کانفرنس میں بتایا کہ ایئربس کے ماہرین آزادانہ تحقیقات کیلئے آئیں گے ، سول ایوی ایشین اور پی آئی اے کے انجینئرز بھی اپنے طور پر تحقیقات کر رہے ہیں۔ کوشش ہے 3 ماہ میں تحقیقاتی رپورٹ سامنے آجائے۔ ذمے داروں کے خلاف کارروائی ضرور ہوگی۔ وفاقی وزیر نے کہا کہ اگر وہ ذمے دار ہوں تو استعفی دینے کیلئےتیار ہیں۔

غلام سرور نے بتایا کہ ایمرجنسی لینڈنگ کیلئے ایس او پیز موجود ہیں ، بدقسمتی سے پائلٹ نے ایسا اعلان نہیں کیا کہ وہ ایمرجنسی لینڈنگ کرنا چاہتا ہے تاکہ اس کیلئے انتظامات کئے جاتے۔ انھوں نے بتایا کہ 97 شہدا کی تدفین کیلئے ورثا کو 10 لاکھ روپے دیئے جائیں گے۔ متاثرہ گھروں کی مرمت بھی کرائی جائے گی۔

ٹرینڈنگ

مینو