صوبے پوچھتے تو ایسا لاک ڈاؤن نہ ہونے دیتا، وزیراعظم

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ صوبے اگر ان سے پوچھ لیتے تو وہ ایسا لاک ڈاؤن نہ ہونے دیتے، لاک ڈاون سے سروس سیکٹر تباہ ہوگیا۔ 

اسلام آباد میں اجلاس کے بعد گفتگو کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ لاک ڈاؤن سے پہلے عوام پر اثرات کے بارے میں سوچنا چاہئے، یہاں یورپ اور ووہان کو دیکھ کر فیصلے کئے گئے لیکن ملکی حالات مختلف تھے۔  لاک ڈاون کے تیسرے ہفتے بھوکے لوگ گاڑی والوں پر حملے کرنے لگے تھے۔

وزیراعظم نے کہا کہ انھیں اب تک سمجھ نہیں آئی سندھ میں چھابڑی والوں کو بند کیوں کیا گیا۔ حکومت کیلئے چیلنج یہ ہے کہ لوگوں کو روزگار فراہم کرے اور ایس او پیز پر عمل بھی کرائے، احساس پروگرام کی وجہ سے پاکستان کے حالات بھارت سے بہتر ہیں۔

عمران خان نے کہا کہ غربت اس حد تک ہے کہ لوگ دیہات سے آتے ہیں اور سڑکوں پر سوتے ہیں، اسی لئے پناہ گاہیں قائم کی گئی ہیں، وزیراعظم نے وزرا اور ارکان پارلیمنٹ کو پناہ گاہوں میں جا کر لوگوں کے ساتھ کھانا کھانے کی ہدایت کی۔

ٹرینڈنگ

مینو