سختی کا وقت، ٹائیگر ایس اوپیز پرعمل کرائیں گے

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اپوزیشن چاہتی ہے کورونا سے زیادہ اموات ہوں ، لاک ڈاؤن ہو اور معیشت بیٹھ جائے تاکہ حکومت پر زیادہ تنقید کی جاسکے۔

کورونا وبا سے متعلق اظہار خیال کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ملک میں کورونا کی صورتحال دنیا سے بہتر ہے۔ جیسے جیسے اموات بڑھ رہی ہیں یہ کہا جارہا ہے حکومت کا قصور ہے۔

شہباز شریف کا نام لئے بغیر عمران خان نے کہا کہ یہ لندن سے بھاگے بھاگے آئے ، ماسک پہنا اور لیپ ٹاپ کے سامنے بیٹھ گئے کہ میں بتاوں گا۔ تاثر یہ ملا کہ ملک مشکل میں ہے، یہ ان حالات کو کیش کرانے کی کوشش کر رہے ہیں ، حکومت دباو میں نہیں آئی اور وہ لاک ڈاؤن نہیں کیا جو پڑوسی ملک میں کیا گیا۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پاکستان لاک ڈاؤن نہ کرکے بھارت جیسی صورتحال سے بچ گیا۔ آئندہ دنوں میں اموات بڑھیں گی، اسپتالوں پر دباو بڑھنا شروع ہوگیا ہے اور اسپتالوں میں اتنی جگہ نہیں ہے۔ حکومت ڈاکٹروں کو خصوصی پیکج دے گی اور اسپتالوں میں ڈیٹا منیجر بھیجا جائے گا۔

عمران خان نے بتایا کہ اب سختی کا وقت آگیا ہے ، وہ وزیراعظم ہاوس سے پورے ملک میں ایس او پیز پر عملدرآمد کا جائزہ لیں گے، پنجاب ، سندھ اور خیبرپختونخوا میں ایس او پیز کی رپورٹ آگئی۔ ایسی رپورٹ روزانہ آئے گی اور ٹائیگر فورس کے ساتھ مل کر ایکشن ہوگا، جس علاقے ، دکان، ٹرانسپورٹ یا فیکٹری میں ایس او پیز پر عمل نہ ہوا اسے بند کیا جائے۔

ٹرینڈنگ

مینو