سعودی عرب کی اسرائیل سے تعلقات کیلئے شرط

سعودی عرب نے اسرائیل سے سفارتی تعلقات کی بحالی کیلئے اپنی شرط بتادی جبکہ اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے معاہدے پر بھی پہلا ردعمل دے دیا ہے۔

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے جرمنی میں مہمان ہم منصب ہائیکوماس کے ساتھ پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ انکا ملک عرب امن منصوبے کی بنیاد پر قیام امن چاہتا ہے، سعودی عرب اسرائیلی پالیسیوں کو غلط اور دو ریاستی حل کیلئے نقصان دہ سمجھتا ہے۔

سعودی وزیرخارجہ نے کہا کہ اسرائیل اور متحدہ عرب امارات کے درمیان معاہدے میں شامل ہے کہ تل ابیب مغربی کنارے میں یک طرفہ توسیع روک دے گا، معاہدے کے اس حصے کو مثبت اقدام کے طور پر دیکھا جاسکتا ہے۔

فیصل بن فرحان کا کہنا تھا کہ اسرائیلی بستیوں کی تعمیر اور الحاق کی یک طرفہ پالیسیاں ناجائز اور دو ریاستی حل کیلئے نقصان دہ ہیں۔ یہ اقدامات قیام امن میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ اسرائیل کے ساتھ روابط کی بحالی کیلئے سعودی عرب یواے ای کی پیروی نہیں کرے گا۔ اسرائیل سے سفارتی تعلقات صرف اسی صورت ممکن ہیں جب یہودی ریاست فلسطینیوں کے ساتھ عالمی طور پر تسلیم شدہ امن معاہدہ کرلے۔

ٹرینڈنگ

مینو