ججز دھمکی کیس: آغا افتخار کو توہین عدالت کا نوٹس

محمد عثمان

سپریم کورٹ نے جسٹس قاضی فائز عیسی سمیت ججز کے خلاف دھمکی آمیز ویڈیو سے متعلق کیس میں ملزم آغا افتخار الدین مرزا کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا۔

چیف جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے از خود نوٹس کیس کی سماعت کی، آغا افتخار الدین مرزا کے وکیل نے موکل کی جانب سے غیر مشروط معافی نامہ جمع کرایا۔

جسٹس اعجاز الاحسن نے کہا کہ معافی نامہ جمع کرانے کا فائدہ نہیں ہوگا، چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ آغا افتخار کو 6 ماہ کیلئے جیل بھیج دیتے ہیں۔ وکیل نے کہا کہ افتخار الدین مرزا دل کے مریض ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ بادی النظر میں توہین عدالت کا کیس بنتا ہے۔

سپریم کورٹ نے توہین عدالت کی کارروائی کیلئے شوکاز نوٹس جاری کیا اور آغا افتخار سے ایک ہفتے میں جواب طلب کرکے سماعت 15 جولائی تک ملتوی کردی۔ عدالت میں جمع کرائی گئی ایف آئی اے کی ابتدائی تحقیقات رپورٹ کے مطابق افتخار الدین اور معاون اکبر شاہ کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔ افتخارالدین نے بتایا کہ تقریر کسی کے کہنے پر نہیں کی جبکہ یوٹیوب اور فیس بک سے ویڈیو ڈیلیٹ کی جا چکی ہے۔ ملزمان سے موبائل، لیپ ٹاپ اور کیمرہ برآمد کرکے فرانزک کیلئے بھجوا دیا گیا ہے۔

ٹرینڈنگ

مینو