ویڈیو والا ٹارزن آزادانہ کام نہیں کرسکتا، نون

سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ شہبازشریف کے گھر کارروائی دیکھ کر واضح ہوگیا نیب کیسا ٹارزن ہے ، یہ ٹارزن چلنے والا نہیں۔ کیا احتساب بیورو بدمعاشی کا اڈاہ ہے ، کیا عوام احتساب بیورو کا احتساب نہیں کرسکتے۔

لاہور میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے نون لیگی رہنما شاہد خاقان عباسی نے چیئرمین نیب سے سوال کیا کہ شہبازشریف کی 2 تاریخ کو طلبی کے باوجود 28 مئی کو وارنٹ گرفتاری کیوں جاری کئے گئے۔ انھوں نے کہا کہ تفتیش کیمروں کے سامنے کریں تاکہ سب کو پتہ چلے، شہباز شریف پر ایک پیسے کی کرپشن کا الزام ثابت نہیں ہوسکا۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ چیئرمین نیب ٹیم بھیجیں ، پتہ کرائیں مکان نمبر 2 لین نمبر 1 زمان پارک لاہور پر خرچہ کس نے کیا، کیا وہ اثاثہ قانونی ہے۔ ایک سوال پر انھوں نے کہا کہ جس شخص کی ویڈیو موجود ہو وہ آزادانہ کام نہیں کرسکتا۔ نیب حکومت کے ہاتھوں بلیک میل ہورہا ہے۔

احسن اقبال نے کہا کہ انھوں نے بھی اتنا ہی ٹیکس دیا جتنا عمران خان نے دیا، وہ کرائے کے گھر میں مشکل سے گزارا کرتے ہیں، عمران خان بتائیں وہ اتنا ہی انکم ٹیکس دے کر 300 کنال کے محل میں شاہانہ زندگی کیسے گزارتے ہیں اور 10 کروڑ روپے کا زمان پارک میں نیا گھر کیسے بناسکتے ہیں۔

ٹرینڈنگ

مینو