خادم حسین رضوی کا انتقال، نماز جنازہ کل

تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ علامہ خادم حسین رضوی انتقال کرگئے، مرحوم کی نماز جنازہ کل ادا کی جائے گی۔

22 جون 1966 کو پیدا ہونے والے خادم حسین رضوی کا تعلق ضلع اٹک سے تھا، انھوں نے جہلم و دینہ کے مدارس سے حفظ و تجوید کی تعلیم حاصل کی اور جامعہ نظامیہ رضویہ لاہور سے درس نظامی مکمل کیا۔

علامہ نے گزشتہ دنوں فیض آباد میں ٹی ایل پی کے دھرنے کی قیادت کی تھی اور اسی دوران انھیں بخار ہوگیا تھا۔ انھیں شیخ رشید اسپتال منتقل کیا گیا جہاں وہ انتقال کرگئے۔ مرحوم کا آخری دیدار کل کرایا جائے گا۔

ان کی نماز جنازہ ہفتہ کو صبح 11 بجے مینار پاکستان گراونڈ میں ادا کرنے کا اعلان کیا گیا ہے۔ عقیدت مندوں کی بڑی تعداد مرحوم کی رہائش گاہ ملتان روڈ پہنچ رہی ہے اور ہر آنکھ اشکبار ہے۔

وزیراعظم عمران خان، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور دیگر سیاسی اور سماجی شخصیات نے علامہ کے انتقال پر اظہار تعزیت کیا ہے۔

تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ کا اپنی موت سے متعلق ایک بیان سوشل میڈیا پر وائرل ہے آئیں آپ بھی سنیں۔

اس ویڈیو میں خادم حسین رضوی نے کہا تھا کہ کسی کے بارے میں دو ہی باتیں ہیں یا تو وہ اچھا یا برا ہے، آپ کہہ دیں گے کہ ٹھیک تھا مگر بہت سخت تھا، بچو آج ہمارے ساتھ کھڑے ہو جاؤ، بعد میں میرے جیسا بھی نہیں ملے گا۔

ٹرینڈنگ

مینو