علی زیدی کو دستاویز کس نے دی؟ پیپلزپارٹی

سندھ حکومت کے ترجمان مرتضی وہاب نے کہا ہے کہ وفاقی وزیر علی زیدی نے بڑے بڑے دعوے کئے لیکن کھودا پہاڑ نکلا چوہا، ان کی تمام باتیں جھوٹ کا پلندہ تھیں۔ انھوں نے وہ دستاویزات پیش کیں جو پہلے ہی سوشل میڈیا کی زینت تھیں۔ 

کراچی میں صوبائی وزرا کے ساتھ پریس کانفرنس کے دوران مرتضی وہاب نے کہا کہ سندھ حکومت کی جے آئی ٹی میں تمام   افسران کے دستخط ہیں، علی زیدی نے اسمبلی فلور پر جھوٹ بولا،  عزیربلوچ کے کیس میں 7 ارکان پر مبنی جے آئی ٹی تشکیل دی گئی تھی، انھوں نے اپنی رپورٹ محکمہ داخلہ کو جمع کرادی۔

مرتضی وہاب نے بتایا کہ علی زیدی کہتے ہیں 4 دستخط والی جے آئی ٹی رپورٹ ان کے پاس ہے، یہ رپورٹ نہ سندھ حکومت کو ملی نہ عدالت میں جمع ہوئی ، کون لوگ ہیں جو علی زیدی کو یہ کاغذات دے رہے ہیں ، اگر کسی دستاویز پر تمام دستخط نہیں تو وہ کہاں سے آئے، جے آئی ٹی ایک دو تین چار نہیں ہوتیں،  میری رائے ہوسکتی  ہے کہ علی زیدی کا دماغی توازن ٹھیک نہیں لیکن اس کا فیصلہ کوئی میڈیکل بورڈ کرے گا اور کاغذات پر اپنی فائنڈنگ دے گا اور دستخط کرے گا۔ سندھ حکومت نے سرکاری دستاویز پبلک کردی ہیں۔

صوبائی وزیر سعید غنی نے کہا کہ پی ٹی آئی کے کچھ وزیر چول (بے وقوف) ہیں وہ صرف ہانکتے ہیں۔ علی زیدی نے آج بھی ذوالفقار مرزا کی تعریف کی، وہ آج بھی انھیں اپنا بچہ اور بھائی کہتے ہیں، ذوالفقار مرزا نے اعلان کیا تھا کہ پیپلز امن کمیٹی ہماری زیلی تنظیم ہے اس کے بعد کسی ایک رہنما کا بیان دکھا دیں جس نے یہ بات کہی ہو۔ سانحہ بلدیہ کی جے آئی ٹی رپورٹ بھی تو آئی ہے اس میں آپ کے اتحادیوں پر الزام ہے۔ سعید غنی نے کہا کہ امریکا میں شوکت خانم کیلئے چندہ جمع ہوا اور 3 ملین ڈالر علی زیدی نے اپنے اکاونٹ میں ڈلوائے ان سے یہ پوچھیں پیسے عمران خان کی فیملی کے رکن نے کیسے نکلوائے۔

ٹرینڈنگ

مینو