جاپان: ماونٹ فوجی کی ورچوئل سیر ، ویڈیو

محسن رضا

جاپان کی عظیم ترین تاریخی نشانیوں میں سے ایک ماونٹ فوجی ہے۔ یہ جاپان کا سب سے بلند پہاڑ ہے۔ سطح سمندر سے 3 ہزار 776 میٹر اونچے اس پہاڑ کا نظارہ انتہائی دلفریب ہوتا ہے۔

جنت نظیر ماونٹ فوجی ٹوکیو سے 100 کلومیٹر جنوب مغربی علاقے میں واقع ہے۔ اس پہاڑ کی کشش صدیوں سے لاکھوں سیاحوں کو اپنی جانب کھینچتی رہی ہے۔

فوٹو گرافرز نے ماونٹ فوجی کی دلفریب تصاویر کھینچیں ، فنکاروں نے سحر میں جکڑنے والی پینٹنگز بنائیں ، شاعروں نے شعر کہے ، نثرنگاروں نے رومانوی اور حیرت سے بھری کہانیاں لکھیں۔

جاپانی ثقافت کی علامت اس پہاڑ کو اقوام متحدہ کے ادارے یونیسکو نے عالمی ورثہ قرار دیا ہے۔ اسے مذہبی لحاظ سے بھی اہمیت حاصل ہے۔

سالانہ 10 لاکھ سے زائد زائرین اسے سر کرتے ہیں۔ یہاں جا کر سورج طلوع ہوتا دیکھ لیا تو سمجھیں قسمت چمک اٹھی۔

یہاں آنے والوں کو اسکی انگ کا موقع ملتا ہے جو ان کیلئے یادگار لمحہ بن جاتا ہے۔

اسکی انگ کیلئے امریکا اور یورپ سے نوجوانوں کی بڑی تعداد بھی اس مقام کا رخ کرتی ہے۔

جدید ترین ٹیکنالوجی کے اس دور میں یہاں آنے والوں کو وائی فائی سمیت ہر سہولت میسر ہوتی ہے۔

یہاں آنے والوں کو ماونٹ تنجو ، چوریتو پگوڈا اور فجیوشیدا سنجن شرائن کی زیارت کا بھی موقع ملتا ہے۔

جو لوگ کچھ روز قیام کرنا چاہیں ان کیلئے انتہائی آرام دہ ہوٹلز کی سہولت بھی موجود ہے۔

جاپان کی سیاحت کیلئے بہترین موسم مارچ اور مئی میں ہوتا ہے۔

موسم بہار کے علاوہ ستمبر سے نومبر تک موسم خزاں کا نظارہ بھی دیکھنے سے تعلق رکھتا ہے۔

ماونٹ فوجی سر کرنا ہو تو جولائی سے ستمبر آئیڈیل مہینے تصور کئے جاتے ہیں۔

بدقسمتی سے اس موسم گرما میں ماونٹ فوجی سیاحوں کیلئے بند کردیا گیا ہے۔

1960 میں بھی اسے بند کیا گیا تھا جب شیزواکا پریکفٹورل گورنمنٹ نے اس کے 3 راستوں کا انتظام سنبھالا تھا۔

کورونا وبا نے لوگوں کو دنیا کی سیاحت سے محروم کردیا۔ اس برس لوگ گرمیوں کی چھٹیوں میں فیملی کے ساتھ بیرون ممالک نہیں جا پارہے۔

زبرنیوز نے آپ کو دنیا کی ورچوئل سیر کرنے کا موقع دیا ہے۔ جن ممالک میں لوگوں کی دلچسپی ہے ہم ان کے سیاحتی مقامات کی آپ کو ورچوئل سیر کرائیں گے۔

ٹرینڈنگ

مینو