یوم استحصال، کشمیریوں سے اظہار یکجہتی

مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کا ایک سال مکمل ہوگیا، دنیا بھر میں پاکستانی اور کشمیری آج یوم استحصال منارہے ہیں۔

5 اگست کو مودی سرکار نے آئین کے آرٹیکل 370 کو ختم کرکے غیرآئینی اقدام اٹھایا تھا، اس کے خلاف مقبوضہ وادی میں مکمل ہڑتال کی جارہی ہے جبکہ مودی سرکار نے مختلف علاقوں میں کرفیو بھی نافذ کر دیا ہے۔

پاکستانی قوم اور دنیا بھر میں کشمیری یوم استحصال منا رہے ہیں ، شہر شہر تقریبات ، یکجہتی واک اور احتجاج کا اہتمام کیا گیا ہے۔

وزیراعظم عمران خان آزاد جموں کشمیر کی قانون ساز اسمبلی سے خطاب اور کشمیر کی آزادی تک حمایت جاری رکھنے کے پاکستانی عزم کا اعادہ کریں گے۔

سینیٹ کا خصوصی اجلاس بھی طلب کیا گیا ہے جس میں مظلوم کشمیری عوام کو قربانیاں دینے پر خراج تحسین پیش کیا جائے گا۔

اسلام آباد کی مشہور شاہراہ کشمیر ہائی وے کو سرینگر ہائے وے کا باضابطہ نام دیا جائے گا۔

بھارت نے مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے بعد ردعمل سے بچنے کیلئے وادی کو چھاونی میں تبدیل کردیا تھا۔ مقبوضہ کشمیر میں ایک سال سے پابندیاں عائد ہیں، آزادانہ نقل و حرکت پر پابندی ہے اور بھارتی فورسز بے گناہ افراد کا قتل عام کر رہی ہیں۔

ٹرینڈنگ

مینو